افغانستان میں امریکی ناکامی کا الزام پاکستان پر لگانا غیرمنصافانہ ہے

وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ افغانستان میں امریکا کے کامیاب نہ ہونے کا الزام پاکستان پر لگانا غیر منصفانہ ہے۔

روسی ٹی وی ’آر ٹی‘ کو انٹرویو دیتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ واشنگٹن کی دہشت گردی کے خلاف جنگ میں شامل ہونے پر اسلام آباد کو بہت نقصان ہوا ، اور آخرکار امریکہ نے افغانستان میں اپنی ہی ناکامیوں کا الزام پاکستان پر لگایا۔

وزیراعظم عمران خان نے کہا  کہ دہشت گردی کے خلاف امریکہ کی زیر قیادت عالمی مہم میں شامل ہونے کے بعد پاکستان نے شدید متاثر ہوا۔ اس سے قبل ” سن 1980 کی دہائی میں افغانستان میں سوویت یونین کے خلاف جنگ لڑنے کے لئے۔اسلام آباد اسلامی مجاہدین جنگجوؤں کو تربیت دے رہا تھا ، جنھیں "امریکی سی آئی اے نے مالی اعانت دی تھی ۔ لیکن چونکہ بعد میں امریکہ نے افغانستان پر حملہ کیا  "تو یہ گروہ ہمارے خلاف ہوگئے۔

وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ دہشتگردی کی خلاف مہم میں ہم نے 70،000 افراد کو کھو دیے۔ ہماری معیشت کو 100 ارب سے زیادہ کا نقصان ہوا۔ اور آخر کار ہم پر الزام عائد کیا گیا کہ امریکی افغانستان میں ہماری وجہ سے کامیاب نہیں ہو رہے ہیں۔ مجھے لگا یہ پاکستان کے ساتھ بہت نا انصافی ہے ،میں شروع سے اس جنگ کے خلاف تھا، ہم نائن الیون کے بعد امریکا کی جنگ نہ لڑتے تو ہم دنیا کا خطرناک ملک نہ ہوتے

عمران خان نے کہا کہ اتنے نقصانات کے باوجود آخر میں امریکا کی ناکامی پر ہمیں ہی قصور وار ٹھہرایا گیا اور امریکا نے بھی اپنی ناکامیوں کا الزام پاکستان پر عائد کرتا رہا، یہ پاکستان کے ساتھ ناانصافی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ سوویت یونین کے خلاف جنگ میں انہی لوگوں کو تربیت دی گئی، جس کا فنڈ سی آئی اے نے دیا تھا، یہ تربیت یافتہ لوگ تھے اور ایک عشرے بعد جب امریکا وہاں گيا تو کہا گيا کہ یہ جہاد نہیں یہ دہشت گردی ہے۔ یہ بہت بڑا تضاد تھا۔

وزیراعظم نے کہا کہ اب آخر میں افغانستان میں امریکا کے کامیاب نہ ہونے کا الزام ہم پر لگادیا گيا جو کہ یہ غیر منصافانہ ہے۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.