عمران خان جتنا ظلم کریں ، ہم کبھی سر نہیں جھکائیں گے، اپوزیشن لیڈر شہباز شریف

ڈپٹی اسپیکر قاسم سوری کی زیرِ صدارت جاری قومی اسمبلی کے اجلاس کے دوران اظہار خیال کرتے ہوئے  قائدِ حزب اختلاف شہباز شریف نے کہا ہے کہ اس مرتبہ جشن آزادی پوری قوم بھاری دل کے ساتھ منائے گی،جو کچھ  کشمیر سے متعلق ہوا اس پر بات کر چکا ہوں۔

انہوں نے کہا کہ 13جولائی 2018 کو بیٹی اورباپ کو ایک دوسرے کےسامنےگرفتارکیا گیا، دونوں باپ اور بیٹی قانون کے سامنے پیش ہونے لندن سے پاکستان آئے تھے۔

انہوں نے کہا کہ ‘عمران خان کی بڑی بھول ہے کہ وہ سمجھتا ہے کہ وہ مسلم لیگ (ن) کو ڈرا دیں گے، یہ گردن کٹ جائے گی مگر ان کے آگے جھکے گی نہیں’۔

اپوزیشن لیڈر کا کہنا تھا کہ ‘مودی سرکار نے کشمیر میں جو بدترین قدم اٹھایا ہے اور اس پر غاصبانہ قبضہ کیا اس پر تحریک انصاف نے کوئی اقدامات نہیں کیے جس پر اپوزیشن نے فیصلہ کیا کہ ہم مل کر کشمیری بھائیوں کے لیے ایک آواز سے بات کریں گے اور پوری دنیا میں اس مسئلے کو اجاگر کریں گے’۔

ان کا کہنا تھا کہ ‘مریم نواز نے استدعا کی کہ مجھے والد سے ملنا ہے وقت دیا جائے، کیا نیب ایک دن انتظار نہیں کرسکتا تھا’۔

انہوں نے کہا کہ ‘یہ پھر ثابت ہوگیا کہ نیب اور پی ٹی آئی گٹھ جوڑ ہے اور یہ اپوزیشن کو دیوار سے لگانا چاہتے ہیں’۔

پشاور کے بی آر ٹی منصوبے کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ ‘اس منصوبے میں 100 ارب روپے کا ڈاکا ڈالا گیا، چوروں اور لٹیروں کو پکڑنے کا دعویٰ کرنے والی تحریک انصاف ان کو جاکر پکڑے’۔

ان کا کہنا تھا کہ پشاور کے بی آر ٹی منصوبے کے حوالے سے آڈیٹر جنرل پاکستان کی رپورٹ بھی سامنے آئی مگر کسی نے اس پر کان نہ دھری۔

انہوں نے کہا کہ ‘یہ ملکی معیشت، اسٹاک ایکسچینج، مہنگائی سے توجہ ہٹانے کے لیے اقدامات کیے جارہے ہیں، جو کرپشن میں ڈوبے ہوئے ہیں وہ بادشاہ بن کر پوری دنیا میں پھرتے ہیں’۔

اپوزیشن لیڈر کا کہنا تھا کہ ‘پوری قوم سوال کر رہی ہے کہ کرپشن کا نزلہ مسلم لیگ(ن) اور پیپلز پارٹی پر گرایا جارہا ہے کیا باقی سب دودھ کے دھلے ہیں’۔

شہباز شریف کا کہنا تھا کہ ‘نواز شریف کو گرفتار کرنے کی اصل وجہ یہ ہے کہ اس نے پاکستان کو اندھیروں سے نکالا اور سی پیک لاکر پاکستان کی ترقی و خوشحالی کے لیے بہت بڑا قدم اٹھایا’۔

شہباز شریف نے کہا کہ مریم نوازباقاعدہ نیب میں پیش ہوتی رہیں،انہوں  نے نیب میں پیشی کےلیے وقت مانگا تھا، کیا نیب ایک دن بھی انتظار نہیں کرسکتا تھا؟

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.